چین کے ہائپرسونک میزائلوں کے تجربے سے امریکا دہل گیا

بیجنگ: چین کی جانب سے ایٹمی ہتھیار لیجانے کی صلاحیت رکھنے والے ہائپرسونک میزائل کے تجربے نے امریکا کوہلاکررکھ دیا ہے مختلف عالمی اداروں سمیت مختلف ذرائع نے چین کی جانب سے میزائل کے تجربے کی تصدیق کی ہے. فنانشل ٹائمزکی رپورٹ کے مطابق چینی فوج نے ہائپرسونک راکٹ لانچ کیا جس نے’ ’لو اوربٹ“ میں دنیا کے گرد چکر لگایا اور اپنے ہدف سے 40 کلومیٹر دور گرا رپورٹ میں لوگوں کو انٹیلی جنس کے حوالے سے بتایا گیا کہ اس ٹیسٹ سے پتہ چلتا ہے کہ چین نے ہائپرسونک ہتھیاروں کے حوالے سے حیرت انگیز پیش رفت کی ہے اور امریکی حکام کے سمجھنے سے کہیں زیادہ ترقی یافتہ ہے.

امریکا اور روس ہائپرسونک میزائل بھی تیار کر رہے ہیں اور گزشتہ ماہ شمالی کوریا نے کہا تھا کہ اس نے ایک نئے تیار کردہ ہائپرسونک میزائل کا تجربہ کیا ہے2019 کی ایک پریڈ میں چین نے اپنے ہائپرسونک میزائل بشمول ڈی ایف -17 کے نام سے معروف ہتھیاروں کو پیش کیا تھا بیلسٹک میزائل آﺅٹر اسپیس (بیرونی خلا) میں اڑتے ہیں. ہائپرسونک ہتھیاروں کا دفاع کرنا مشکل ہے کیونکہ وہ کم اونچائی پر اہداف کی طرف اڑتے ہیں لیکن آواز کی رفتار سے پانچ گنا زیادہ یا تقریباً 6 ہزار 200 کلومیٹر فی گھنٹہ رفتار حاصل کر سکتے ہیںروس نے 2018 کے اوائل میں بین البراعظمی ہائپر سپرسانک میزائل کا کامیاب تجربہ کیا تھا.

اس حوالے سے روسی صدر ولادی میر پیوٹن نے ”ایونگارڈ“ نامی ہائپر سانگ میزائل کے کامیاب تجربے پر کہا تھا کہ ہائپر سپرسانک میزائل سے دفاعی نظام غیرمعمولی مضبوط ہو گیا اس سے قبل مارچ 2017 کو روس نے کنزحال نامی ہائپرسانک میزائل کا کامیاب تجربہ کی تھا جو آواز کی رفتار سے 10 گنا تیز سفر کی صلاحیت رکھتا ہے.