پٹرول اور ڈیزل پر پٹرولیم لیوی بڑھا کر 80 روپے فی لٹر کرنے کی تجویز

اسلام آباد:وفاقی حکومت نے فنانس بل میں پٹرول اور ڈیزل پر پٹرولیم لیوی بڑھا کر 80 روپے فی لٹر کرنے کی تجویز دی ہے جبکہ موجودہ زیادہ سے زیادہ حد 60 روپے فی لٹر ہے جس سے آئندہ مالی سال 2024-25 کے لیے 1281 ارب روپے حاصل ہوں گے یہ رقم بین الاقوامی مالیاتی فنڈ (آئی ایم ایف) کی جانب سے مئی 2024 کے اسٹینڈ بائی ارینجمنٹ (ایس بی اے) کے تحت اپنے دوسرے اور آخری جائزے میں اگلے سال کے لیے لگائے گئے تخمینے سے 201 ارب روپے زیادہ ہے.
حکومت نے دیگر پٹرولیم مصنوعات جیسے ہائی آکٹین بلینڈنگ کمپوننٹ (ایچ او بی سی)، لائٹ ڈیزل آئل (ایل ڈی او) اور ای 10 پٹرول پر پٹرولیم لیوی (پی ایل) کی شرح 50 روپے سے بڑھا کر 75 روپے فی لٹر کرنے کی تجویز دی ہے تاہم کھانا پکانے کے مقاصد کے لئے بڑے پیمانے پر استعمال ہونے والے مٹی کے تیل (ایس کے او) کے لئے پی ایل ریٹ 50 روپے فی لٹر برقرار ہے گزشتہ مالی سال کے لیے بنیادی طور پر بجٹ پی ایل 869 ارب روپے تھا جو اگلے سال کے لیے 47.4 فیصد اضافے کی نمائندگی کرتا ہے.
وفاقی حکومتوں کی جانب سے پی ایل ریونیو کو اعلی ترجیح دی گئی ہے کیونکہ یہ وفاقی تقسیم شدہ پول (ایف ڈی پی) کا حصہ نہیں ہے جسے نیشنل فنانس کمیشن (این ایف سی) فارمولے کے مطابق صوبوں کے ساتھ بانٹنا ہوتا ہے حکومت نے مالی سال 25-2024 کے لیے گیس انفرااسٹرکچر ڈیویلپمنٹ سیس (جی آئی ڈی سی) کی وصولی کو 2اعشایہ5 ارب روپے پر برقرار رکھنے کی بھی تجویز دی ہے جو رواں مالی سال کے لیے مقرر نظر ثانی شدہ ہدف کے مساوی ہے جی آئی ڈی سی کو اصل میں رواں مالی سال کے لئے 40 ارب روپے کی بہت زیادہ رقم کا بجٹ دیا گیا تھا.
جون 2020 میں سپریم کورٹ نے فیصلہ دیا تھا کہ معیشت کے مختلف شعبوں کو 60 ماہ میں 407 ارب روپے کے بقایا جات کی ادائیگی کرنی ہوگی لیکن مختلف کمپنیوں کی جانب سے حاصل کردہ حکم امتناع کی وجہ سے حکومت کو ابھی تک یہ رقم موصول نہیں ہوئی قدرتی گیس ڈیویلپمنٹ سرچارج (جی ڈی ایس) یعنی صوبوں کو دی جانے والی گیس کی مقررہ اور فروخت کی قیمت میں فرق سے آئندہ سال 25.618 ارب روپے آنے کا تخمینہ لگایا گیا ہے جبکہ رواں سال بجٹ 40 ارب روپے اور نظر ثانی شدہ 27.169 ارب روپے ہے.
وزارت خزانہ کی ہدایت پر آڈیٹر جنرل آف پاکستان (اے جی پی) سوئی ناردرن گیس پائپ لائن لمیٹڈ (ایس این جی پی ایل) اور سوئی سدرن گیس کمپنی (ایس ایس جی سی) دونوں گیس کمپنیوں کے جی ڈی ایس دعووں کا آڈٹ کر رہا ہے تاکہ اصل وصولی کا پتہ لگایا جا سکے حکومت نے مالی سال 2024-25 میں مائع پٹرولیم گیس (ایل پی جی) پر پی ایل کے لئے 3.537 بلین روپے جمع کرنے کا بھی منصوبہ بنایا ہے اس کا موازنہ رواں مالی سال کے لیے 3.516 ارب روپے کے نظر ثانی شدہ ہدف سے کیا گیا ہے رواں مالی سال میں ایل پی جی پر پی ایل کا اصل بجٹ نمایاں طور پر 12 ارب روپے تھا.
مالی سال 2024-25 کے بجٹ میں خام تیل کی مقامی قیمتوں پر رعایت کے طور پر 25 ارب روپے برقرار رکھنے کا تخمینہ لگایا گیا ہے یہ رقم موجودہ مالی سال (2023-24) کے نظر ثانی شدہ تخمینے کے برابر ہے رواں مالی سال کا اصل بجٹ کم یعنی 20 ارب روپے تھا آئندہ سال کے بجٹ میں صوبوں کے لیے خام تیل پر رائلٹی میں کمی اور قدرتی گیس پر رائلٹی میں اضافے کی بھی تجویز دی گئی ہے‘آئندہ مالی سال کے لئے خام تیل پر رائلٹی کے لئے بجٹ رقم 58.654 ارب روپے مقرر کی گئی ہے جبکہ گزشتہ سال کے لئے 57.017 ارب روپے کے نظر ثانی شدہ تخمینے لگائے گئے تھے حکومت نے آئندہ مالی سال میں قدرتی گیس پر رائلٹی کی مد میں 103.751 ارب روپے کا بجٹ رکھا ہے جبکہ نظر ثانی شدہ ہدف 93.567 ارب روپے مقرر کیا گیا ہے اور 2023-24 میں 75 ارب روپے کا بجٹ رکھا گیا ہے.

اپنا تبصرہ بھیجیں